آرٹیکلاہم خبریںفرنٹ پیج

القاعدہ کا داعش سے عجیب مطالبہ

القاعدہ کا داعش سے عجیب مطالبہ
(تسنیم خیالی)
گزشتہ ماہ مصری علاقہ سینا میں دہشت گرد تنظیم داعش کے جنگجوؤں کے خلاف ایک کارروائی کی گئی تھی جس میں متعدد داعشی مارے گئے تھے اس وقت کسی نے بھی اس کارروائی کی ذمہ داری قبول نہیں کی تھی مگر حال ہی میں القاعدہ سے منسلک مصر میں سرگرم’’جند الاسلام‘‘نامی دہشت گرد تنظیم نے کارروائی کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا ہے کہ 11 اکتوبر کو داعش کے ’’خوارج‘‘ کے خلاف جند الاسلام کے دو جنگجوؤں نے کارروائی کی تھی،کارروائی کی وجہ بتاتے ہوئے جند الاسلام کا کہنا تھا کہ داعش مصر میں مسلمانوں اور بے گناہ افراد کا قتل کررہی ہے اور اپنے ہی بھائیوں کو دھوکہ دے رہے ہیں جس کی بنا پر یہ کارروائی سر انجام پائی،انٹرنیٹ پر شائع ہونے والی جند الاسلام کی اس آڈیو ریکارڈنگ میں جندالاسلام نے داعش کے جنگجوؤں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ توبہ کرتے ہوئے داعش کو چھوڑ دیں کیونکہ داعش مسلمانوں کا خون بہا رہی ہے۔القاعدہ کا داعش سے یہ مطالبہ مضحکہ خیز اور حیران کن ہے۔گویا ایک بے غیرت دوسرے بے غیرت سے بے غیرتی چھوڑنے کا مطالبہ کر رہا ہے،داعش نے القاعدہ کی گود سے جنم لیا تھا اور ظاہر ہے کہ بیٹا اپنی ماں پر ہی گیا ہے ،القاعدہ والے شاید یہ بھول گئے ہیں کہ مسلمانوں کا قتل عام اور ان کی آبروریزی کا جرم انہوں نے شروع کیا تھا۔

یہ اس دور کی بات ہے جب القاعدہ کا افغانستان،صومالیہ اور عراق میں کافی زور تھا اور اب بھی القاعدہ والے متعدد ممالک میں مسلمانوں کا خون بہا رہے ہیں۔

شام میں سرگرم بہت سی دہشت گرد تنظیمیں بالخصوص النصرہ فرنٹ القاعدہ سے وابستہ ہیں اور القاعدہ کے سرغنہ ایمن الظواہری کو اپنا امیر سمجھتے ہیں،اسی طرح القاعدہ اس وقت یمن میں بھی سرگرم ہے اور وہاں کے مسلمانوں کے قتل اور خون ریزی میں ملوث ہیں۔

تو پھر کیا القاعدہ کے جنگجوؤں پر توبہ لاگو نہیں؟
آخر القاعدہ والے اپنے جرائم پر کب توبہ کریں گے؟

ویسے تو نہ داعش اور نہ ہی القاعدہ کو توبہ کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ اسلام اور انسانیت ابھی تک ان دونوں کے جرائم نہیں بھولے،لہٰذا القاعدہ کو چاہیے کہ وہ اپنی بے تکی باتیں بند کریں۔

اس معاملے میں ایک اور بات غور طلب ہے اور وہ یہ کہ القاعدہ کا داعش والوں سے توبہ کرنے کا مطالبہ اس بات کا ثبوت ہے کہ القاعدہ کے اندرونی حالات ٹھیک نہیں اور داعش کے منظرعام پر آنے سے اسے کافی نقصان پہنچا کیونکہ اسی کے جنگجوؤں نے اسے خیر باد کہتے ہوئے داعش میں شمولیت اختیار کی تھی جس کی وجہ سے وہ کمزور پڑ گئے ،اب داعشیوں کو توبہ کرنے کا کہ کر القاعدہ داعش کے جنگجوؤں کو پھر سے القاعدہ میں شامل ہونے کی دعوت دے رہی ہے۔

Tags

Khuahar Fatima

Imamia Students Organization Pakistan (Girls Wing), Join us for all the updates. Email: isogirlswing@gmail.com

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Close